Wednesday, December 1, 2021
Home اردو جون ایلیا۔ یکتائے زمانہ شاعر... جمال عباس فہمی

جون ایلیا۔ یکتائے زمانہ شاعر… جمال عباس فہمی


آخری بار آہ کرلی ہے

میں نے خود سے نباہ کرلی ہے

۔۔۔۔

اپنے سر اک بلا تو لینی تھی

میں نے وہ زلف اپنے سر لی ہے

۔۔۔۔۔

دل برباد کو آباد کیا ہے میں

آج مدت میں تمہیں یاد کیا ہے میں نے

۔۔۔۔۔

اک ہنر ہے جو کرگیا ہوں میں

سب کے دل سے اتر گیا ہوں میں

۔۔۔۔۔

کیا بتاؤں کہ مر نہیں پاتا

جیتے جی جب سے مرگیا ہوں میں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اس گلی نے یہ سن کے صبر کیا

جانے والے یہاں کے تھے ہی نہیں

۔۔۔۔۔۔۔

اور کیا چاہتی ہے گردش ایام کہ ہم

اپنا گھر بھول گئے ان کی گلی بھول گئے

۔۔۔۔۔

کتنی دل کش ہو تم کتنا دلجو ہوں میں

کیا ستم ہے کہ ہم لوگ مر جائیں گے

۔۔۔۔۔۔۔

ایک ہی حادثہ تو ہے اور وہ یہ کہ آج تک

بات نہیں کہی گئی بات نہیں سنی گئی

۔۔۔۔۔۔۔

کون اس گھر کی دیکھ بھال کرے

روز اک چیز ٹوٹ جاتی ہے

۔۔۔۔۔۔۔

ہم کو یاروں نے یاد بھی نہ رکھا

جون یاروں کے یار تھے ہم تو

۔۔۔۔۔۔۔

مجھ کو اب کوئی ٹوکتا بھی نہیں

یہی ہوتا ہے خاندان میں کیا

۔۔۔

بولتے کیوں نہیں میرے حق میں

آبلے پڑ گئے زبان میں کیا

۔۔۔۔

یہ مجھے چین کیوں نہیں پڑتا

ایک ہی شخص تھا جہان میں کیا

۔۔۔۔۔۔۔

اب نہیں کوئی بات خطرے کی

اب سبھی کو سبھی سے خطرا ہے

۔۔۔۔۔۔

ہم نے کئے گناہ تو دوزخ ملی ہمیں

دوزخ کا کیا گناہ کہ دوزخ کو ہم ملے

۔۔۔۔

ہنسی آتی ہے مجھ کو مصلحت کے ان تقاضوں پر

کہ اب اک اجنبی بن کر اسے پہچاننا ہوگا

۔۔۔۔۔۔۔

آئینہ کہتا ہے کہنا تو ہمیں چاہئے تھا

تو زندہ ہے۔ رہنا تو نہیں چاہئے تھا

۔۔۔۔۔۔۔

ترک الفت سے کیا ہوا حاصل

تب بھی مرتا تھا اب بھی مرتا ہے۔



Source link

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Most Popular

Recent Comments

error: We are sorry, You can\'t Copy it.