Wednesday, December 1, 2021
Home اردو نظم: یادوں کی لائبریری...ام ماریہ حق

نظم: یادوں کی لائبریری…ام ماریہ حق


میرے ذہن کی لائبریری میں

کچھ کتابیں سجی ہیں

یادوں کی

جن کے اوراق پر میں نے

ماضی کے کچھہ لمحے

وقت سے چرا کر

تہہ در تہہ تحریر کئے ہیں

جب بھی !

فرصت کے خوشنما جھونکے

ان کتابوں سے ٹکراتے ہیں

ہر صفحے کی منجمد یادیں

ذہن قرتاس پر پھیل جاتی ہیں

گیلی مٹّی کی

سوندھی خوشبو بن کر

کبھی میری روح سے

لپٹ جاتی ہیں

اور کبھی آنکھوں میں

سلگتے منظر دے کر

درد کے کالے بادل بن کر

پرانے زخم پھر سے

ہرے کر جاتی ہیں

* * *

ام ماریہ حق



Source link

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Most Popular

Recent Comments

error: We are sorry, You can\'t Copy it.